وزیراعظم عمران خان کا سیاحتی چھکا

اللہ کریم سے دعا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کی جان ، ایمان اور حکومت کی حفاظت فرمائے۔ ایسے زبردست کام وزیراعظم عمران خان کی حکومت کررہی ہے۔ جسکی ماضی  میں مثال تک نہیں ملتی۔ 

پوری دنیا اس وقت سسٹین ایبل ڈویلپمنٹ کی طرف گامزن ہے۔ مگر افسوسناک بات یہ ہے کہ ماضی میں سابقہ پاکستانی حکومتیں صرف ان پراجیکٹس پر کام کرتی تھیں۔ جن میں کمیشن زیادہ سے زیادہ مل سکے۔ چاہے پاکستانی عوام کو اس کا جتنا مرضی بوجھ برداشت کرنا پڑ جائے۔ کرپٹ سیاسدانوں کو اسکی کوئی پرواہ ہی نہیں ہے۔ اب آتے ہیں اصل موضوع کی طرف جو کہ پاکستانی سیاحت کے حوالے سے ہے۔ 

گزشتہ عیدالاضحی 2021 جون میں پاکستانی افراد نے حیرت انگیز طور پر سیاحت کے حوالے سے تمام ماہرین کو حیران کردیا ہے۔ خبر یہ ہے کہ عیدالاضحی کے دن سے لے کر صرف سات دنوں میں تقریبا ستائیس لاکھ  پاکستانی سیاحوں نے خیبر پختونخوا کے دلفریب اور خوبصورت علاقوں کا رخ کیا ہے۔ 

جس سے تقریبا چھیاسٹھ ارب کا کاروبار ہوا۔ 

یاد رکھیں چھیاسٹھ ارب روپے اگلے ایک ماہ تک کئی چھیاسٹھ ارب روپوں میں تبدیل ہوجائیں گے۔ کیونکہ اکنامکس کا ایک اصول ہے جتنا پیسہ زیادہ گردش کرے گا۔ اتنا ہی لوگوں کو فائدہ ہوگا۔ 

اور حکومت کو بھی اچھا خاصا ٹیکس موصول ہو گا۔ 

اب دیکھا جائے حکومت کو کچھ زیادہ نہیں کرنا ہوتا۔ 

حکومت نے سیاحت کے فروغ کے لیے راستے کشادہ اور محفوظ بنانے ہیں۔ 

اور چیزوں کے معیار متعین کرنے اور امن و امان برقرار رکھنا ہے۔ 

باقی تفریحی سہولیات کے لیے پرائیویٹ افراد کی حوصلہ افزائی کی جائے۔ 

پاکستان اگر سیاحت میں اپنا آدھا شیئر بھی حاصل کرنے میں کامیاب ہوجائے۔ تو یہ ہندسہ بیس ارب ڈالر سالانہ سے زائد ہونے کاقوی امکان ہے۔ 

اور یہ کامیابی اگلے پانچ سے دس سال میں حاصل کی جاسکتی ہے۔ 

ابھی تو پاکستان  زیادہ تر  ملکی سیاحوں کے فوائد حاصل کررہا ہے ۔ جب غیر ملکی سیاح پاکستان میں پچاس لاکھ سالانہ تک پہنچ جائیں گے۔ تو پاکستان کی آمدنی میں بے پناہ اضافہ ہو جائے گا۔ 

ابھی چند ہفتے پہلے پاکستان نے سکردو ائیرپورٹ کو انٹرنیشنل سٹیٹس دینے کا فیصلہ کرلیا ہے۔ جس سے گلگت بلتستان میں سیاحت اور برآمدات کا نیا چھکا لگنے کا امکان ہے۔ 

پاکستان کی تاریخ میں پہلی دفعہ سکردو ائیرپورٹ پر ایک ہی دن میں بارہ جہازوں نے لینڈ اور ٹیک آف کیا۔ جب کے پہلے اس ائیرپورٹ پر ہفتے میں صرف پانچ کے قریب جہازوں کی آمد ہوتی تھی۔ 

یہ سب وزیراعظم عمران خان کے سیاحتی انقلاب کا حصہ ہے۔ بلاشبہ اس کو وزیراعظم عمران خان کا سیاحتی چھکا قرار دیا جاسکتا ہے۔ 

وزیراعظم عمران خان سے گزارش ہے کہ آپ ماؤنٹین ٹورزم پر کافی اچھا کام کررہے ہیں۔ لیکن اگر آپ تاریخی سیاحت پر بھی مکمل زور لگائیں تو پاکستان کو سالانہ سو ارب ڈالر ریوینیو مل سکتا ہے۔ 

 صرف فرانس میں ایفل ٹاور جو کہ دوسو سال قدیم ہے۔ فرانس کو سو ارب ڈالر کے سیاحتی ریوینیو  میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔

پاکستان کے پاس موہنجوڈارو سندھ ، ہڑپہ ، اور ٹیکسلا پنجاب ،  اور بلوچستان میں ہزار سالہ قدیم تاریخی مقامات ہیں۔ ان کو صرف بہترین ڈویلپ کرنا چاہیے۔ یہ اقدامات پاکستانی سیاحت کو بوسٹ اپ کرسکتے ہیں۔ 

 مغربی دنیا تاریخی اور قدیم مقامات کی شدید دلدادہ ہے۔ 

Latest posts by AamirBaig (see all)

    اس بلاگ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

    اپنا تبصرہ بھیجیں